رواں سال منعقد ہونے والا کراچی لٹریچر فیسٹول ختم ہونے کے باوجود کا اس کا تذکرہ ہر  خاص و عام کی زبان پر ہے۔ یہ فیسٹیول 5 فروری 2016 کو کراچی کے بیچ لگژری ہوٹل میں منعقد ہوا۔ آکسفورڈ یونیورسٹی پریس کی جانب سے شروع کردہ یہ تین روزہ فیسٹول گزشتہ سات سالوں کے دوران اب پاکستان میں سال کی سب سے اہم ادبی و ثقافتی تقریب کا درجہ اختیار کرگیا ہے۔ یہ فیسٹول بین الاقوامی اور مقامی ادب کے شائقین اور اس کا آغاز کرنے والوں کے لئے ایک مرکز کا کردار ادا کرتا ہے اور کوکا-کولا گزشتہ چار سال سے اس میلے کا خصوصی اسپانسر ہے۔ کمپنی کی جانب سے کراچی لٹریچر فیسٹیول کے لئے تعاون کا مقصد یہ ہے کہ اپنے مکمل عزم کے ساتھ خوانگی اور مطالعہ کی عادت کو بالخصوص نوجوانوں میں فروغ دیا جائے۔ یہ کوکا۔کولا کا عالمی عزم ہے کیونکہ کمپنی گزشتہ سالوں میں مختلف لٹریچر فیسٹولز بشمول فلیپینو امریکن بُک فیسٹول، لاگوس بک اینڈ آرٹ فیسٹول، لائبریری آف کانگریس نیشنل بک فیسٹول، جے پور لٹریچر فیسٹول، میامی بُک فیئر اور ساوانہ بُک فیسٹول کے لئے تعاون کرچکی ہے۔

اس فیسٹول کی اسپانسرشپ تین زاویوں سے ہے؛ کوکا۔کولا 2016 میں پاکستانی مصنف کی بہترین نان فکشن کتاب کے لئے پرائز منی ایوارڈ کا مرکزی اسپانسر تھا۔ فیسٹول میں کوکا-کولا خصوصی طور پر بیوریج فراہم کرنے والا ادارہ تھا اور سب سے اہم زاویہ یہ ہے کہ رواں سال کوکا۔کولا پاکستان نے نیشنل والنٹیئر پروگرام (این وی پی) کے نام سے نیا کاروباری سماجی ذمہ داری کے اقدام کا آغاز کیا ہے۔ جس کا مقصد یہ ہے کہ پسماندہ افراد کی سماجی و معاشی ترقی کے لئے فلاحی اداروں کے کام میں رضاکارانہ کام کے ذریعے تعاون کیا جائے۔

5 فروری 2016 کو کوکا۔کولا کے پاکستان اور افغانستان خطے کے ڈائریکٹر پبلک افیئرز اینڈ کمیونکیشنز، فہد قادر نے کراچی لٹریچر فیسٹول کی ایوارڈ تقریب میں شرکت کی اور عروسہ کنول کو پاکستانی مصنف کی بہترین نان فکشن کتاب کا ایوارڈ پیش کیا۔ ان کی کتاب کا موضوع ' Rethinking Identities in Contemporary Pakistani Fiction: Beyond 9/11' ہے اور اس میں امریکہ میں نائن الیون حملوں کے بعد مسلمانوں کے خلاف مختلف تاثر اور روایتی سوچ تشکیل پائی۔ فیسٹول میں ایوارڈ جیتنے کے اعلان پر عروسہ کنول حیران رہ گئیں اور اس اعزاز پر اپنے جذبات پر قابو نہ پاسکیں، اس موقع پر انہوں نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا، " پاکستان میں نوجوان ادیبوں کی صلاحیت کو تسلیم کرنے پر میں کے ایل ایف اور کوکا۔کولا کی مشکور ہوں۔ اس کتاب کا مقصد بعد از نوآبادیاتی مواد بالخصوص جڑواں ٹاورز گرنے کے بعد عالمی طاقت کے ساتھ مذاکرات اور اہم طریقوں سے برتری کے ساتھ پاکستانی اینگلوفون فکشن کے کردار سے متعلق موضوع پر دوبارہ قلم اٹھانا ہے۔ میں انتہائی مشکور ہوں اور خوش ہوں کہ میرے کام کو جیوری اور فیسٹول کے منتظمین نے سراہا ہے جس پر میں آپ کا شکریہ ادا کرتی ہوں۔" 

مزید یہ کہ اپنی روایات کو برقرار رکھتے ہوئے کوکا۔کولا کراچی لٹریچر فیسٹول 2016 میں خصوصی بیوریج سپلائیر تھی جس میں برانڈ کو نمایاں کرتے ہوئے فیسٹول کے تین روز تک کوکا۔کولا کے 21 ہزار کین اور پانی کے برانڈ کنلے کی 17400 بوتلیں تقسیم کی گئیں۔ یہ بوتلیں اور کین داخلی دروازے پر فراہم کئے جانے والے کوپن کے بدلے تقسیم کئے گئے۔ اپنے دس سے زائد رضاکاروں کے انتظام کے ساتھ کوکا۔کولا کے اسٹال پر عوام کا جم غفیر رہا جس میں وہ بلامعاوضہ کوکا۔کولا کے کین اور پانی کی بوتل کنلے حاصل کرنے کے لئے جمع تھے تاکہ کراچی کے گرم موسم میں لوگ تازگی حاصل کرسکیں۔ قابل احترام مصنفین، مقررین اور مہمانوں نے کوکا۔کولا کی جانب سے اس خیرسگالی کے جذبے کو سراہا۔ 

کراچی لٹریچر فیسٹول میں نیشنل والنٹیئر پروگرام میں عوام کی شمولیت کے لئے ایک الگ اسٹال بنایا گیا تھا۔ کوکا۔کولا کی جانب سے اس پروگرام میں تعاون کے سلسلے میں ٹرپل باٹم۔لائن (Triple Bottom-Line) کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر زوہیر علی شریف نے بتایا، "نیشنل والنٹیئر پروگرام ٹیکنالوجی پر مبنی ایک اقدام ہے جو کاروباری اور دیگر رضاکاروں کو اس جگہ اکھٹا کرے گا جہاں ان کی سب سے زیادہ ضرورت ہوگی اور جہاں ان کی مخصوص صلاحیتیں اور دلچسپیاں مکمل طور پر فلاحی اداروں سے مطابقت رکھتی ہوں گی۔" این وی پی کا خصوصی سافٹ ویئر فلاحی اداروں اور خواہش مند رضاکاروں کے درمیان رابطہ فراہم کرتا ہے جن میں انفرادی سطح کے علاوہ کاروباری ادارے بھی شامل ہیں۔ کوکا۔کولا کمپنی نے لوگوں کو واپس لوٹا کر معاشرے میں مقبولیت حاصل کرلی ہے اور این وی پی کمپنی کے کاروباری سماجی ذمہ داری کے موجودہ پورٹ فولیو میں ایک اور اضافہ ہے۔ پہلے مرحلے میں این وی پی کراچی میں شروع کیا گیا ہے اور جلد ہی خواہش مند رضاکاروں کی مجموعی تعداد میں اضافے سے اس پروگرام کو لاہور اور اسلام آباد تک بھی بڑھایا جائے گا۔

کوکا۔کولا پاکستان اپنے نوجوانوں کی بہتری سے متعلق حوصلہ افزائی کے لئے انتہائی اہم رہا ہے۔ اپنے انتہائی کامیاب پروجیکٹس جیسے کوک اسٹوڈیو، اسپرائٹ اسٹریٹ کرکٹ، 321 بھاگو! کے ساتھ کمپنی کا ہمیشہ سے یہ تصور رہا ہے کہ اپنے لوگوں، علاقوں اور کرہ ارض کی دیکھ بھال کی جائے۔ کمپنی کی جانب سے فیسٹولز میں تعاون سے کراچی لٹریچر فیسٹول پھیل کر انٹرٹینمنٹ، فوڈ، فارغ اوقات اور ادب جیسے شعبوں تک پھیل جاتا ہے۔