لائنوں والی بوتل،ترچھے سکرپٹ والا لوگو اورگہرا سرخ رنگ مل کر کوکاکولا کی مشہور پہچان بنتے ہیں۔اور سن دوہزار سات سے اب تک موسیقی کے پانچ خوشگوار سُر مل کر ہمارے برانڈ کی آنکھوں کو خوشگوار لگنے والی ظاہری پہچان کو کانوں کو بھلی لگنے والی موسیقی سے اور بھی دلکش بنا رہے ہیں۔

خوشگوار شروعات:یہ سُر پہلے سن دوہزار چھ کے ایک ٹی وی اشتہار ‘‘ہیپی نیس فیکٹری’’ اور ایک آن لائن فلم میں ظاہر ہوئے جسے امیجننگ دا ومیسکل کا نام دیا گیا تھا،اس فلم میں کوکا کولامشین کے اندر کی اینی میٹڈ دنیا کو دکھایا گیا تھا۔اس اشتہار نے ایوارڈ جیتا اور اس کے بعد آئندہ برسوں میں اس کے مزید حصے بھی بنے ۔اس اشتہار کی اینی میشن شاندار تھی اورسینما ساؤنڈ سکیپ بھی بہت زبردست تھا۔کوک کے گلوبل ڈائریکٹر آف فلم اینڈ میوزک پروڈکشن نک فیلڈر بتاتے ہیں کہ ‘‘سن دوہزار سات میں جب ہم ‘اوپن ہیپی نس’ مہم شروع کر رہے تھے تو ہماری خواہش تھی ہمیں ویسی ہی آواز دینے والے آلات حاصل ہوں جنہیں مکڈونلڈ اور انٹل استعمال کرتے تھے’’۔انہوں نے کہا ‘‘ہم نے اس وقت موجود اپنے آلات موسیقی کے ذخیرے کا جائزہ لیا اور ہمیں پتا چلا کہ جس چیز کی ہمیں تلاش تھی وہ ‘ہیپی نس فیکٹری’کی اس دھن سے ہی مل سکتا تھا جو ہر مارکیٹ میں چل رہی تھی’’۔ہماری ٹیم نے فلم سے پندرہ سروں والی دھن کو لے کر اسے پانچ سروں والی یادگار بنا دیا۔پھر اسے مختلف آلات کے ساتھ مختلف طریقوں اور سطحوں پر چیک کیا گیا۔کوک کے وہ پہلے اشتہارات جن میں یہ موسیقی جلوہ گر ہوئی ان میں سے ایک تھا ‘‘شیئر دا لوو’’۔سن دوہزار سا ت کے آخر میں پیش کئے گئے اس اشتہار میں ان پانچ سروں کو ٹیلیفون کے بٹنوں پر بجتے ہوئے سنا جا سکتا ہے۔‘پاپ’چارٹس:‘‘اوپن ہیپی نس’’ سنگل جس میں سی لو گرین، فال آؤٹ بوائے کے پیٹرک سٹمپ، پینک ایٹ دا ڈسکو کے برینڈن یوری، جم کلاس ہیروز کے ٹریوس میکائے اور گریمی ایوارڈ کیلئے نامزد ہونے والی گلوکارہ جینیل مونائے شامل تھیں وہ پہلا حقیقی گیت تھا جس میں یہ دھن شامل کی گئی تھی۔یہ پرجوش کاوش سن دوہزار نو میں ریلیز کی گئی بعد میں مختلف زبانوں میں چوبیس الگ الگ گیت تیار کئے گئے اور انہیں تیس سے زائد ممالک میں ریلیز کیا گیا۔اس وقت سے یہ پانچ سُر کوکاکولا کے سینکڑوں گیتوں کا حصہ رہے ہیں جن میں مارک رونسن اور کیٹی بی کا ‘‘اینی ویئر ان داورلڈ’’ (دنیا میں کہیں بھی) بھی شامل ہے جس نے لندن اولمپک گیمز دوہزار بارہ کیلئے ‘‘موو دا بیٹ کمپین’’ کی نمائندگی کی۔ان کے علاوہ سن دوہزار گیارہ میں ون نائٹ اونلی کا ‘‘کین یو فیل اٹ’’ اور دوہزار دس میں چھٹیوں کے موضوع پر بنائے گئے گیت (ٹرین کا ‘‘شیک اپ کرسمس’’، دوہزار گیارہ کا(نتاشا بیڈنگ فیلڈ کا اسی دھن پر کئی زبانوں میں گیت) اور دوہزار بارہ میں‘‘سم تھنگ ان دا ایئر’’، جس پر گریسن سینڈرز، لوریان مئے اور جونو نے پرفارم کیا شامل ہیں۔اس دھن میں قابل سماعت موسیقی کی ایک پوری لائن ہے جو پاپ دور کے زیادہ تر گانوں میں فٹ ہو جاتی ہے جس سے دنیا بھر میں مختلف انواع کی موسیقی میں اس کی شمولیت کا دروازہ کھل گیا۔

ایک آفاقی ترانہ:اب تک اس دھن کا سب سے کامیاب استعمال کنان کا ‘‘ویونگ فلیگ’’ تھا۔جنوبی افریقہ میں سن دوہزار دس کے فیفا ورلڈ کپ کیلئے کوک کے اس گیت نے سترہ ملکوں میں موسیقی کے چارٹس پر پہلی پوزیشن حاصل کی اور فٹبال کے مداحوں سے میچوں کے دوران گانے اور نعرے لگانے کی پرجوش اپیل بھی کر دی۔فیلڈر کہتے ہیں ‘‘جب سٹیڈیمز میں یہ گانا بجتا تھا تو تماشائی خود سے ہی اس کا جواب پرجوش انداز میں گا کردیتے تھے’’۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ‘‘ہمیں اس گانے کی شہرت کا پہلی مرتبہ احساس تب ہوا جب ہم نے یوٹیوب پر ایک ویڈیو دیکھی جس میں برازیلین فٹبال ٹیم کے کھلاڑی ریو میں تماشائیوں سے کھچاکھچ بھرے ایک سٹیڈیم میں میچ کھیلنے سے پہلے یہ پانچ سروں والی دھن گنگنا رہے تھے’’۔
سب سے پہلے مداح:دنیا بھر میں صارفین نے کوکاکولا اور اس کی موسیقی کیلئے اپنی محبت کا اظہار یوں کیا کہ انہوں نے یوٹیوب اور دیگر سوشل میڈیا چینلز پر اس دھن کی اپنی تشریح کو پوسٹ اور شیئر کیا۔کچھ جھلکیوں پرایک نظر ڈالیے۔
آلات موسیقی کا جائزہ: کوکاکولا کے گانے، اشتہارات اور دوسرے تخلیقی کاموں میں مختلف آلات موسیقی اور ساؤنڈ ایفیکٹ استعمال کر کے دھن تیارکی گئی ہے۔مثال کے طور پر جاپان کے سب وے سٹیشنز میں یہ سُر مسافروں کو آنے والی ٹرین سے باخبر کرتے ہیں۔کوک کے ڈائریکٹر آف گلوبل انٹرٹینمنٹ مارکیٹنگ جو بیلیوٹی کہتے ہیں ‘‘ہم نے جو کام نہیں کیا ہے وہ یہ ہے کہ ہم نے اس میں الفاظ شامل نہیں کئے ہیں’’۔وہ کہتے ہیں ‘‘ہم کبھی کبھی اس پر بات کرتے ہیں لیکن ہمیشہ فیصلہ یہی ہوا ہے کہ ایسا کرنا زبردستی اور زیادہ نمائشی لگے گا۔ہمارا مقصد ہمیشہ سے یہ رہا ہے کہ اس دھن کو پاپ کلچر سے جوڑا جائے اور ہم اس کی ایسی تشہیر نہیں چاہتے تھے کہ یہ صرف کوکاکولاکی آواز ہے’’۔
کوک او رمیوزک ڈیلرز نے حال ہی میں ‘‘باون سانگز آف ہیپی نس’’ جاری کیا ہے جس میں دنیا بھر کے ابھرتے ہوئے فنکاروں کو دعوت دی جائے گی کہ وہ اس حوالے سے اپنے گیت جمع کرائیں جس میں کوکاکولا کی پانچ سُروں والی دھن بھی شامل ہو سکتی ہے لیکن ایسا کرتے ہوئے انہیں اپنی اصل آوازوں کو درست طور پر پیش کرنا ہو گا۔یہ پروگرام کوکاکولا کی پلیس لسٹ کو سپورٹ کرتا ہے جو کہ سوشل میوزک کی ایپلیکشن ہے اور اس کی ہوسٹ سپاٹی فائی ہے۔مستقبل میں یہ دھن برانڈ کی سامبا/بیلے فنک سے متاثرہ گیت میں سنی جائے گی جو دوہزار چودہ کے برازیل میں ہونے والے فیفاورلڈ کپ
کیلئے تیار کیاجائے گا۔